Rashid Ali Parchaway

راشید صاحب کے لیے اطلاع ہے کہ آنے والے وقت میں اپ کمپیوٹر کے ماہرین میں شمار ہونگے انشاء اللہ

Jamal Abad Michni Parchaway.

Keywords

Affiliates


free forum

Forumotion on Facebook Forumotion on Twitter Forumotion on YouTube Forumotion on Google+


لفظ "Bye " کی حقیقت؟

Share
avatar
Admin
Admin
Admin

Posts : 527
Join date : 09.10.2014

لفظ "Bye " کی حقیقت؟

Post by Admin on Sun May 10, 2015 11:23 am

میں یہ لفظ بہت زیادہ بولا اور لکھا جاتا ہے، جب کوئی کسی جدا ہوتا ہے ، سفر میں روانا ہوتا ہے تو وہ یہ لفظ بار بار یہ لفظ دہراتا ہے حتی کے والدین اپنے چھوٹے چھوٹے بچوں کو بھی یہ لفظ سکھاتے ہیں، لیکن یہ لفظ اپنے اندر شرکیہ معنی رکھتا ہے، اس کا معنی یہ بنتا ہے جاؤ تم پوپ کے حوالے ہو اور وہ ہمیشہ تمہاری حفاظت کرے گاہم مسلمان ہوتے ہوے بھی ویسٹ کی اندھی تقلید کرتے ہیں اور ہمین یہ علم بھی نہیں ہوتا کہ ہم کیا کر رہے ہیں،اسی لیے رسول کریم کا ارشاد گرامی ہے:
"وَإنَّ العَبْدَ لَيَتَكَلَّمُ بالكَلِمَةِ مِنْ سَخْطِ اللَّهِ تَعالى لا يُلْقِي لَها بالاً يَهْوِي بِها في جَهَنَّمَ" (بخاری)
"بندہ اللہ کی ناراضی میں کوئی بات کرتا ہے اور اس بات کو اتنی اہمیت بھی نہیں دیتا جس کی وجہ سے وہ جہنم مین چلا جاتا ہے۔"
اس لفظ کی وجہ سے ہم اللہ کے ساتھ شرک کرتے ہیں اور ہمین اس کا علم بہی نھیں ہوتا کہ ہم اللہ کے ساتھ پوپ کو شریک ٹھہرا رہے ہیں ، لہذا ہمیں اس لفظ کی حقیقت کو سمجھنا چاہیے اور اس لفظ بائیکاٹ کرنا چاہیے اللہ ہمارا حامی و ناصر ہو، آمین یا رب العالمین!!






لفظ بابا پہلے پاپا تھا اور پاپا کا لفظ پہلے پوپ کے لیے بولا جاتا تھا جب انگریز برصغیر میں آیا تو ساتھ اپنی تہذیب بھی لایا آج ہم بے خبری میں ان کے مذہبی الفاظ روز مرہ گفتگو میں بولتے اور لکھتے ہیں اور اسی طرح گاڈ کا لفظ بھی ہم استعمال کرتے ہیں لیکن اس کے بائیکاٹ کا کبھی سوچتے بھی نہیں ہیں


____________
راشد صاحب

    Current date/time is Fri Sep 21, 2018 5:14 am